اپنی پارٹی کے بحران کے سلسلہ میں دہلی میں کیمپ کئے ہوئے ملائم سنگھ یادو لکھنو لوٹ گئے ہیں۔ میڈیا سے لکھنو پہونچنے پر ملائم سنگھ یادو نے زیادہ بات نہیں کی تاہم انہوں نے کہا کہ ان کے اگلے قدم کے بارے میں وہ میڈیا کو واقف کروائیں گے ۔ کہا جارہا ہے کہ ملائم سنگھ یادو اپنے بیٹے وزیر اعلی اکھلیش سنگھ یادو سے ملاقات کررہے ہیں۔
دوسری جانب الیکشن کمشنر سے ملاقات کے بعد اکھلیش سنگھ یادو کے بااعتماد ساتھی پروفیسر رام گوپال یادو نے بتایا ہے کہ سماج وادی پارٹی کے 90 فیصد ارکان پارلیمنٹ اور ارکان مقننہ اکھلیش کے ساتھ ہیں اس لئے اکھلیش کی قیادت والی پارٹی ہی حقیقی سماج وادی پارٹی ہے اور الیکشن کمیشن سے یہی درخواست کی گئی ہے کہ اس بات کو تسلیم کیا جائے ۔ اس موقع پر ان کے ہمراہ سینئر لیڈر نریش اگروال بھی موجود تھے ۔
اُدھر شیوپال یادو بھی دہلی سے لکھنوپہنچ گئے ہیں۔ ایرپورٹ پر جب میڈیا کے نمائندوں نے ان سے سوال کیا کہ کیا آب بھی اکھلیش یادو اورملائم سنگھ یادو کے جاری اجلاس میں شرکت کریں گے توان کاکہناتھا کہ اگرنیتاجی انہیں بلاتے ہیں تو وہ ضرور اجلاس میں شرکت کریں گے۔

اکھلیش سنگھ یادو اور ملائم سنگھ یادو کے درمیان مصالحت کیلئے کوشاں پارٹی کے سینئر لیڈر اعظم خان دہلی پہونچنے کے باوجود بھی ملائم سنگھ یادو سے ملاقات نہیں کرپائے ۔ ایک طرف اعظم خان دہلی پہونچے دوسری طرف ملائم سنگھ ان سے ملے بغیر لکھنو روانہ ہوگئے ۔ بعد میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے اعظم خان نے کہا کہ مصالحت کیلئے راستہ اور دروازے ابھی بند نہیں ہوئے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے کوشش کی تھی اور انہیں کامیابی ملی تھی لیکن حالات بگڑ گئے لیکن ان کی کوشش جاری رہے گی ۔

Post a Comment

 
UA-24837031-1