Thursday, 5 January 2017

جی او 123 پر حیدرآباد ہائی کورٹ نے عبوری حکم التوا جاری کیا




ریاست کے مختلف آبپاشی پراجکٹس کے سلسلہ میں حصول اراضی کیلئے جاری کردہ جی او 123 پر حیدرآباد ہائی کورٹ نے عبوری حکم التوا جاری کیا ہے ۔ جولائی 2015 میں حکومت نے یہ جی او جاری کیا تھا جس کے خلاف کسانوں نے20 درخاستیں ہائی کورٹ میں داخل کی تھیں ۔ عدالت نے آج واضح کیا کہ 2013 میں مرکز کے منظورہ حصول اراضی قانون کے مطابق ہی اراضی حاصل کرنے پر عدالت کو کوئی اعتراض نہیں ہوگا ۔ ملنا ساگر پراجکٹ اور دیگر آبپاشی پراجکٹس سے متاثر ہونے والے کسانوں کی درخواستوں کی سماعت کرتے ہوئے عدالت نے یہ عبوری احکام جاری کئے ۔ ان کسانوں نے الزام لگایا تھا کہ حکومت پراجکٹس کیلئے زبردست ان کی اراضی حاصل کرنے کی کوشش کررہی ہے ۔ جس پر سرکاری فوج نے واضح کیا تھا کہ پراجکٹس کیلئے زبردستی اراضی حاصل نہیں کی جارہی ہے بلکہ رضا کارانہ طور پر اراضی دینے والوں کی اراضی حکومت حاصل کررہی ہے اور اس کیلئے مرکز کے حصول اراضی قانون سے بڑھ کر معاوضہ متاثرین کو دیا جارہا ہے ۔ دونوں فریقین کے دلائل کی سماعت کے بعد عدالت نے آج 123 پر عبوری احکام جاری کئے اور اس جی او کے تحت اراضی حاصل نہ کرنے کی حکومت کو ہدایت دی ۔ جی او123 کو منسوخ کرنے داخل کردہ درخواست کی سماعت عدالت نے ملتوی کردی ۔

SHARE THIS

Author:

Hyderabad No.1 News Channel

0 comments: